Who is Zaid Hamid?

By linking the following information, I do not intend to discredit or humiliate anybody. In fact I am myself impressed by Zaid Hamid. But the contents presented here have weight. Wallah Alam.

http://kadnan.com/blog/2008/10/01/zaid-hamid-about-baitullah-mehsud/

Another face of the ISI mouth piece and Musharraf’s sympathiser – Mr Zaid Hamid

by N. Shahrukh

Ghalib’s verse which later became a proverb “Hain kawakib kuchh, nazar aatay hain kuchh” is true for Mr Zaid Hamid, the fiery young expert of strategic issues and Jihad who has shot to fame in a few months through a programme Brasstacks on TVone.

Yes, Zaid Hamid is really IMPRESSIVE and he is taking the simple idealistic people of Pakistan, especially youth and women by storm. Had I not known him for the last 20 years, I would, too, have been all praise for this ‘new’ bright face on the TV talking about Zionism, Muslim conquests, Afghan Jihad, good and bad Talibans, and what not through his self-sponsored TV programme.

Just a REMINDER and WARNING to all my friends who trust my words:

If you guys remember the Pakistan false prophet, YUSUF ALI, who was arrested and sentenced to death by the Lahore High Court and then murdered in Kot Lakhpat jail by a fellow prisoner – this guy Zaid Hamid was known as Zaid Zaman at that time and was the Khalifah of that Kazzab. Zaid is still leading that cult which belongs to the firqah batinyah of sufism and they have a different aqeedah altogother which they only profess within their inner core. Many of my personal friends fell prey to his charisma in the 1990s, some of them reverted back to Hidayah and were instrumental in filing a case against Yusuf Ali which ultimately lead to his death sentence and the cult members dispersed for a few years.

All of the followers of Yusuf Kazzab are now gathering once again in Islamabad and after 11 years Zaid Zaman has reappeared as Zaid Hamid.

I first came to know about Zaid Hamid when he acted as a translator to Hekmatyar in 1989 during his visit to Karachi. I was really impressed by the bright faced young engineer from NED University who spoke excellent Persian, Pashto, Urdu and English. Later, I came to know that the training centre for Pakistani mujahideen in Posta Fez, Jalalabad was run by this man.

I soon got introduced to new friends who were part of his team in Afghanistan. I even tried to run away from home in 1991 at the age of 14 to go to Afghanistan but was some how caught and persuaded by my family to refrain. In the same year I distributed several cassettes of a documentary – Qasasul Jihad – produced by Zaid Zaman, which showed live scenes of combat between Afghan mujahideen and Russian forces and was the first of its kind. For me Zaid Zaman and his team were like the re-incarnation of the heroes of Muslim medieval history.

However, soon Zaid Zaman was the centre of a scandal of misappropriation of funds of a large UK-based NGO, Muslim Aid, of which he was a representative in Pakistan and Afghanistan. He also then parted ways with Hekmatyar and Haqqani and joined the ranks of Ahmed Shah Masood. Later he abandoned Jihad altogether and became a Sufi.

In 1994, when I was in aitikaf in Ramazan, one of Zaman’s close associates, who was also a very close friend of mine, came to meet me and started talking strangely about the “real” meanings of Islam denouncing each and every known Islamic scholar. He said that all translations and commentaries of Quran till date were blasphemous. He also said that every century has an ‘Imam-e-zamana’ who we should take bayah (oath of allegiance) of and he would soon arrange my meeting with that Imam.

Alhamdulillah, because of my strong beliefs I never ever met that so-called Imam-e-zamana but many of my friends fell into the trap. Soon, Yusuf Ali was being invited to dinner parties in many of my friends’ homes who were seen holding beads (tasbeeh) in their hands and preaching zikr and sufism here and there.

I lost many of my closest friends as I felt very uneasy with their beliefs and discussions. The basis of their belief was a ‘maudhu’ hadith that Allah (SWT) created the noor of Muhammad (SAW) before the creation of the Universe. That ‘noor’ will remain till eternity and even if the Prophet (SAW) is physically not with us today, his noor is present in the ‘Imam-e-zamana’ and hence he should be followed as the Prophet (SAW) was by his companions. Na’aauzubillah!

Meanwhile, Muhammad Tahir of Weekly Takbeer broke the news of Yusuf Ali and his cult quoting statements of some of the defectors who realized what was wrong and were ready to go to court against this fitnah. Yusuf Ali was accused of claiming to be a false prophet, immoral practices including sexual abuse of his women followers and homosexuality. Soon, a case was filed against him and the Tahaffuz Khatme Nabuwwat people also became a party.

Yusuf Ali was sentence and sentenced to death based on irrefutable evidence of his misguided beliefs including the claim of false prophethood.

Click to the link below to read a BBC report by Zafar Abbas on the death sentence of the Pakistani false prophet Yusuf Ali:
http://news.bbc.co.uk/1/hi/world/south_asia/867449.stm

The Tahaffuz-e-Khatm-e-Nabuwwat office at Numaish, MA Jinnah Road and journalist Muhammad Tahir still has the record of that case and clippings of related news reports containing statements of witnesses who were once part of the cult themselves.

The name of Zaid Zaman Hamid also appeared in several of the news reports appearing in those days in Takbeer, Ummat, Khabrain, Jasarat, etc as he was the key promoter and khalifa of Yusuf Kazzab and the witnesses during the court proceedings and the press statements mentioned his name.

According to my knowledge, Zaid Hamid is still leading that cult in Islamabad and sources close to him confirm that he still proclaims the same beliefs of Yusuf Kazzab. It is not confirmed, tough, whether the new “Imam-e-zamana” is Zaid Zaman himself or some other person.

More links:
one
Two
Three

Advertisements

9 thoughts on “Who is Zaid Hamid?

  1. بسم الله الرحمن الرحيم

    قل اعوذ برب الناس (1) ملك الناس (2) اله الناس (3) من شر الوسواس الخناس (4) الذي يوسوس في صدور الناس (5) من الجنة والناس (6) سورة “الناس “.

  2. یوسف کذاب اور زید حامد کے شکار
    متفرق
    جسارت کے ان صفحات پر ڈاکٹر فیاض عالم کے زید (زمان) حامد سے متعلق مضامین چھپے جن پر کچھ قارئین کا بہت سخت ردعمل آیا۔ جن دنوں یہ مضامین چھپے‘ ہمیں بھی دستیاب معلومات کی بنیاد پرکچھ لکھنے کا خیال آیا۔ لیکن زید حامد کے متاثرین کا، جن میں اکثریت خواتین کی ہے، سخت ردعمل دیکھتے ہوئے ارادہ ترک کردیا اور اس مسئلے پر تحقیق شروع کردی۔ ”یوٹیوب“ پر ان کے پروگرام بھی دیکھے اور مختلف ناموں سے چھپنے والے ان کے مضامین اور تجزیاتی رپورٹوں کا مطالعہ شروع کیا۔ زید حامد جو کچھ کہتے ہیں اس سے کلی طور پر اتفاق ممکن نہیں۔ تاہم ان کے ماضی اور اس کے صحیح ہونے پر اصرار کو دیکھتے ہوئے ان کی صحیح باتیں بھی تحقیق کی متقاضی ہیں۔ زید حامد کے خیالات سے متاثر جسارت کی ایک قاری کا استدلال ہے کہ ہمیں یہ نہیں دیکھنا چاہیے کہ ”کون کہہ رہا ہے بلکہ یہ دیکھنا چاہیے کہ کیا کہہ رہا ہے“۔ یہ کلیہ غلط ہے‘ اگر غلط نہ ہوتا تو جب کفارِ مکہ نے یارِ غار سیدنا ابوبکر صدیق ؓ سے کہا کہ آپؓ کے دوست محمد(صلی اللہ علیہ وسلم) کہہ رہے ہےں کہ وہ رات کے ایک حصے میں مسجد حرام سے مسجداقصیٰ اور وہاں سے آسمانوں کی سیر کرکے آئے ہیں؟ ابوبکر صدیق ؓ نے بغیر کسی تامل کے یہ کیوں کہہ دیا کہ محمدصلی اللہ علیہ وسلم کہہ رہے ہیں تو سچ کہہ رہے ہیں۔ اس گواہی پر سیدنا ابوبکر ؓکو قرآن نے صدیق کا لقب دیا۔ کیا اتنی بڑی گواہی دینے سے قبل ابوبکر ؓ نے اس دعوے کو عقل کی بنیاد پر پرکھا؟ یا یہ دےکھ کر گواہی دی کہ کون کہہ رہا ہے؟ خود اللہ نے اُس وقت تک کسی نبی پر نبوت کی ذمہ داری نہیں ڈالی جب تک اس کے اخلاق اور کردار کی گواہی اُس زمانے کے لوگوں نے نہیں دی۔ اور نبوت کے اعلان سے قبل نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم نے اہلِ مکہ کے سامنے جو سوال رکھا وہ بھی ہم سب کو یاد ہے۔ تو پھر ہم کس طرح سے کہہ سکتے ہیں کہ یہ نہ دیکھو کہ کون کہہ رہا ہے؟ ٹی وی ون کے ”مرد ِمومن“ کے یوسف کذاب ملعون کے ساتھ تعلق کے ناقابلِ تردید شواہد موجود ہےں۔ فی الوقت اس کالم کے ذریعے آپ کو یوسف کذاب، زید حامد اور ان کے فرقہ¿ باطنیہ کے دو نواجون تائبین سے ملواتے ہیں جنہوں نے برسوں اس فرقے کے لیے کام کیا لیکن اللہ تعالیٰ نے ان پر خاص کرم کیا اور ان کو ہدایت نصیب ہوئی۔ یوسف کذاب کے مقرب خاص اور زید حامد کے دوست رضوان طیب کے بھائی منصور طیب کہتے ہیں: ”میں زید حامد کو اُس وقت سے جانتا ہوں جب اس کا یوسف علی سے تعلق نہیں بنا تھا۔ زید 1988ءکے انتخابات میں بہت سرگرم تھا۔ 1989ءمیں اس نے ایک تصویری نمائش کا اہتمام کیا اور اس کے لیے ایک وڈیو فلم بھی تیار کی تھی۔ اس نمائش کا اہتمام علاقہ سوسائٹی میں مختلف مقامات پر کیا گیا۔ اُس زمانے میں یہ مختلف جہادی رہنماﺅں کے ترجمان کی صورت میں بھی نظر آیا۔ اس کی شخصیت سے ہم بہت زیادہ متاثر تھے۔ یہ اپنے آپ کو بہت بڑا جہادی رہنما سمجھتا تھا۔ اُس زمانے میں اس نے افغان جہاد کے حوالے سے ایک وڈیو فلم ”قصص الجہاد“ بھی تیار کی۔ پھر 1993ءمیں جہادِ افغانستان ختم ہوگیا۔ یہ وہ دور تھا جب اس نے تمام مجاہد رہنماﺅں کو گالیاں دینی شروع کردیں۔ 1993-94ءمیں یہ لاہور سے اپنے ساتھ یوسف کذاب کو لے آیااور اس کو علاقہ سوسائٹی کے تحریکی ساتھیوں سے متعارف کرایا اور کہا کہ یہ ایک بزرگ ہے جو صرف ذکر کی بات کرتا ہے۔ اگر کوئی سوا لاکھ دفعہ ورد کرے گا تو اس کو نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا دیدار نصیب ہوجائے گا۔ میرے بڑے بھائی رضوان طیب‘ یوسف علی کے خاص مقربین میں شامل ہوگئے تھے اس وجہ سے یوسف علی اور زید زمان میرے گھر آتے تھے۔ زید زمان جس کا پہلے سے ہمارے گھر آنا جانا تھا‘ یوسف کذاب کو ہمارے گھر لے آیا تھا۔ اُس زمانے میں علاقہ سوسائٹی کے جمعیت اور جماعت سے متاثر اور متعلق تین درجن سے زائد افراد اس سے متاثر ہوئے۔ میرے بھائی تو اس حد تک متاثر تھے کہ انہوں نے ہماری دکان کا ایک حصہ بیچا اور یوسف کذاب کو ایک گاڑی خرید کر دی اور لاکھوں روپے نقد دیئے۔ زید حامد یوسف کذاب کا مقرب اوّل تھا اس لیے پیسوں کی وصولی وہ کرتا تھا۔ میں دعوے سے کہہ سکتا ہوں کہ زید زمان نے خود اپنی جیب سے ایک ہزار روپے بھی نہیں دیئے ہوں گے۔ یوسف کذاب کو جو رقم دی جاتی تھی اس کو مختلف وقتوں اور مواقع کے حساب سے کبھی تحفے کا نام دیا جاتا تھا اور کبھی نذر و نیاز کا۔ زید حامد نے مجھے یوسف کذاب کے نظریات پر مبنی پمفلٹ دیے اور مختلف مساجد کے باہر تقسیم کرنے کو کہا۔ ہمارا پورا گھرانا اس چکر میں پڑگیا تھا لیکن میرے بڑے بھائی رضوان طیب کے سوا سب یوسف کذاب اور زید زمان کے شر سے محفوظ رہے۔ میرا مولانا مودودیؒ کے لٹریچر کا اچھا خاصا مطالعہ تھا۔ یہ مطالعہ شاید اس فتنے سے بچنے کے لیے اللہ تعالیٰ نے مجھ سے کروایا تھا۔ مجھ سے کبھی بھی زید زمان اور یوسف کذاب کی باتیں اور اس کی شخصیت ہضم نہیں ہوئی۔ ایک دفعہ کسی کے گھر پر نمازکی امامت کرتے ہوئے یوسف کذاب کی کال آئی۔ وہ نماز چھوڑ کرکافی دیر تک موبائل پر باتیں کرتا رہا، سب نمازی ہاتھ باندھ کر اس کا انتظار کرتے رہے‘ جب اس نے سکون سے بات مکمل کرلی تب آیا اور باقی نماز مکمل کی۔ اس کی جماعت میں خواتین اور حضرات ایک ہی صف میں کھڑے ہوتے تھے۔ یہ اپنی طرز کی مخلوط نمازیں ہوتی تھیں۔ میرے بھائی کو بھی بالآخر اس بات کا احساس ہوگیا کہ یہ سب کچھ غلط تھا۔ سوچ سوچ اُن کی دماغی حالت خراب ہوگئی۔ آج بھی وہ زید زمان اور یوسف کذاب کو گالیاں دیتے ہیں۔ ان کا علاج ذہنی امراض کے معالج ڈاکٹر مبین اختر کے پاس چل رہا ہے۔ ہم تو فرقہ باطنیہ کے دست و بازو بن بیٹھے تھے‘ یہ تو اللہ کا کرم تھا کہ اس نے ہدایت دی۔ میری تمام مسلمانوں خصوصاً مذہبی فکر اور تحریکوں سے وابستہ لوگوں سے گزارش ہے کہ وہ اس فتنے کا ادراک کریں اور زید زمان کی صورت میں یوسف کذاب کی دوسری انٹری کو ناکام بنادیں تاکہ لوگ گمراہ نہ ہوں۔“ سعد موٹن منصور طیب کے بڑے بھائی اور یوسف کذاب کے خاص مقرب رضوان طیب کا دوست تھا۔ علاقہ سوسائٹی سے تعلق رکھنے والا سعد شروع ہی سے مذہبی رجحان رکھتا تھا، اس لیے وہ رضوان طیب کے ذریعے اس فرقہ باطنیہ کے قریب آیا۔ اس کے ساتھ پانچ سال رہا لیکن اس کے دل نے کبھی اس فرقے کو دل سے تسلیم نہیں کیا‘ بلکہ ان لوگوں کی عجیب و غریب حرکتوں کی وجہ سے بالآخر وہ اس فرقے سے الگ ہوگیا اور پھر اللہ نے اس کو اس فرقے کے خلاف کام کرنے کی توفیق دی۔ سعد موٹن کہتا ہے: ”زید زمان سے میرا تعارف رضوان طیب نے کرایا تھا۔ یہ اُس زمانے کی بات ہے جب افغان جہاد کے آخری دن چل رہے تھے اور طالبان کابل کو فتح کرکے وہاں حکومت بنانے کی پوزیشن میں آگئے تھے۔ کراچی سے کچھ لوگ تیار ہوکر افغان جہاد میں حصہ لینے جارہے تھے۔ جب طالبان کی حکومت بنی تو کچھ لوگوں نے سوچا کہ کیوں نہ پاکستان میں بھی طالبان کی طرز پر خلافت قائم کی جائے۔ مذہبی سوچ رکھنے والوں کو اپنی طرف راغب کرنے کے لیے یہ کہنا ہی کافی تھا۔ اللہ کی راہ میں جان قربان کرنے سے زیادہ خوشی کی بات اور کیا ہوسکتی ہے! رضوان طیب کی اسلامک سینٹر کے پلیٹ فارم پر زید زمان سے ملاقات ہوئی۔ پھر یہ دنوں مسلم ایڈ کے لیے کام کرنے لگے اور میں بھی ان کے ساتھ مل گیا۔ مسلم ایڈ کا کارڈ آج بھی میرے پاس موجود ہے۔ میں ان کے ساتھ فنڈز اکٹھا کرتا تھا۔ ہم نے افغان جہاد کے حوالے سے ایک مووی ”قصص الجہاد“ کے نام سے تیار کی تھی۔ زید زمان اس کا ڈائریکٹر تھا۔ اس سی ڈی کی سیل کی ذمہ داری میری تھی۔ اس کے بعد زید زمان کی ملاقات یوسف کذاب سے ہوئی۔ یہ اس کو کراچی لے آیا۔ رضوان طیب، سہیل احمد اور عبدالواحد کراچی میں اس کے شروع کے ساتھیوں میں سے تھے۔ ان لوگوں نے خلافت کا آسرا دے کر کراچی سے ایک تحریک کا آغاز کیا اور جمعیت اور جماعت کے لوگوں کو ٹارگٹ بنایا۔ ہر آدمی کو اس کے رجحان کے حساب سے گھیرنے کی حکمت عملی وضع کی گئی۔ اگر کوئی جہاد سے متاثر تھا تو اس کو اس حوالے سے راغب کرنے کی کوشش کی۔ کوئی کسی اور فکر سے وابستہ تھا تو اس کو قریب لانے کے لیے اس فکر کے قصیدے پڑھے گئے۔ مذہب کو بنیاد بنایا گیا اور تاثر دیا گیا کہ ان کا مقصد خلافت کا قیام ہے۔ اس کے بعد کراچی میں نشستوں کا انعقاد شروع کیا گیا۔ یہ لوگ یوسف کذاب کو حضرت کہتے تھے۔ اس کو ان نشستوں میں بلایا جاتا تھا۔ اس نے شروع میں اپنے آپ کو عاشقِ رسول کہنا شروع کیا۔ پھر اللہ اور رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے نور کی باتیں کرنے لگا۔ پھر کہنے لگا کہ محمد کا نور حضرت آدم علیہ السلام سے لے کر قیامت تک رہے گا۔ یہ نور کسی بشر کی صورت میں ظاہر ہوتا رہتا ہے جس کو دیکھنے کے لیے خاص بصیرت کی ضرورت ہوتی ہے جو ایک خاص طریقہ کار سے حاصل ہوتی ہے۔ اُس وقت تک اس نے یہ دعویٰ نہیں کیا تھا کہ موجودہ دور میں وہ بشر (نعوذباللہ) وہ خود ہے۔ جو لوگ اس کی گرفت میں آجاتے تھے اُن کے متعلق وہ کہتا تھا کہ یہ آگے درجے کے ہوگئے ہیں۔ وہ اس موقع پر کہا کرتا تھا: اقبال تیری دید کی آج عید ہوگئی کہ یار لباسِ بشر میں آن ملا وہ دعویٰ کرتا تھا کہ یہ اقبال کا غیر مطبوعہ شعر ہے جس پر حکومت ِہند نے پابندی عائد کردی تھی۔ ایک خاص وظیفے کے بعد یہ اپنے پیروکار کو بشارت دیتا تھا کہ محمدصلی اللہ علیہ وسلم نے آپ کی عاجزی کو قبول فرمایا ہے، اس لیے وہ لباسِ بشر میں یعنی (نعوذباللہ) یوسف کذاب کی صورت میں حاضر ہے۔ اور اس طرح یہ خودکو محمد ظاہر کرتا تھا۔ مجھے کافی عرصے تک ذکر کرایا گیا۔ میرا تعلق چونکہ مذہبی گھرانے سے ہے اس لیے بہت ساری باتیں مجھ سے ہضم نہیں ہوتی تھیں۔ کئی مرتبہ مخلوط محفلوں پر اعتراض کی وجہ سے کہا گیا کہ اس کو نشستوں میں نہ لایا جائے۔ میرا دل کھٹکتا تھا کہ کہیں نہ کہیں گڑبڑ ہے۔ مجھے یہ بھی بتایا گیا کہ قرآن کے سات ترجمے اتارے گئے جس میں ایک صرف ان لوگوں کے پاس محفوظ ہے۔ جیسا کہ میں نے پہلے عرض کیا یوسف کذاب کے کام کے لیے پنڈی کے زید حامد اور کراچی کے رضوان طیب، سہیل احمد اور عبدالواحد کو خاص ذمہ داریاں سونپ دی گئی تھیں۔ ان کو (نعوذباللہ) صحابیوں کے درجوں سے نوازا گیا تھا۔ ان لوگوں کا اصل مقصد پیسے بٹورنا‘ عقائد کو بگاڑنا اور مریدوں کو خواتین کی طرف راغب کرنا تھا۔ ہر محفل مخلوط ہوتی تھی۔ حتیٰ کہ نمازیں بھی مخلوط ہوتی تھیں۔ خواتین اور مردوں کو ایک مقام دیا جاتا تھا۔ایلیٹ گھرانوں کی خواتین ان کی طرف راغب ہوتی تھیں۔ان محفلوں میں عشق و محبت کی باتیں ہوتی تھیں، عشقیہ اشعار سنائے جاتے تھے۔ اکثریت ان لوگوں کی تھی جو صاحب ِمال اور صاحب ِاثر و رسوخ تھے۔ بڑے بڑے تاجر، فوج اور بیوروکریسی کے لوگ اس کے جال میں پھنس چکے تھے۔ بیعت کرنے والوں کو اہلِ بیت کہا جاتا تھا۔ یہ لوگ پابند ہوتے تھے کہ اپنے مال کا ایک حصہ جمع کرائےں۔ یوسف کذاب کی کراچی آمد پر ”جشنِ آمد ِ حضرت“ کے نام سے تقریب منعقد کی جاتی تھی۔ قیام و طعام کا اہتمام ہوتا تھا۔ قیمتی تحائف دینے پڑتے تھے۔ ایک خاص قیمت سے کم کے تحائف قبول نہیں کیے جاتے تھے۔ محفلوں میں عام لوگوں کو شرکت کی اجازت نہیں تھی۔ جو ان کے عقیدے سے اختلاف کرتا تھا وہ نقصان اُٹھاتا تھا۔ لوگ اس حد تک یوسف کذاب کے عشق میں مبتلا تھے کہ اپنی بیٹیاں اور بیویاں پیش کردی تھیں۔ تقریباً ڈھائی سو خواتین نے اپنے شوہروں سے طلاق لیے بغیر نئی شادیاں کرلیں۔ یوسف کذاب اپنے اہلِ بیت سے کہتا تھا کہ نکاح سے پہلے اپنی ہونے والی بیوی کو میرے پاس بھیجو۔ اس عمل کو معراج کے سفر کا نام دیا جاتا تھا۔ خواتین گھنٹوں اُس کے ساتھ خلوت میں رہتی تھیں۔ اگر کوئی ان بے ہودگیوں کو دیکھ کر انہیں غلط کہتا تو اس کا انجام برا ہوتا تھا۔1994ءمیں ایک نوجوان نے علی الاعلان یوسف کذاب کو برا بھلا کہا۔ اس کا قتل ہوا۔ اس قتل کو ڈکیتی کہا گیا۔ لیکن یہ ایک ایسی ڈکیتی تھی جس میں اس نوجوان کے پیسے چھینے گئے اور نہ ہی اس کی موٹر سائیکل۔ جب بیت المکرم مسجد میں اس کی نمازہ جنازہ پڑھی جارہی تھی اُس وقت یوسف کذاب ایک مقرب کی شادی میں شریک تھا۔ نوجوان لڑکے اور لڑکیاں اس فرقے کا ہدف ہوا کرتے تھے۔ میرے دل ودماغ نے کبھی اس کو قبول نہیں کیا، لیکن پھر بھی پانچ سال تک ان لوگوں کے ساتھ رہا۔ شاید ڈر کی وجہ سے کہ کہیں مارا نہ جاﺅں، یا پھر شاید اللہ نے اس لیے مجھے ان کے ساتھ رکھا تاکہ ان کو قریب سے دیکھوں اور معاشرے پر یہ سب کچھ واضح کردوں کہ یہ لوگ کون ہیں۔ میں نے مختلف مکاتب فکر کے علماءسے رابطہ کیا، سب نے ان لوگوں کو گمراہ کہا۔ آخر میں اس کے جرائم افشا ہوئے اور تحریک ختم نبوت نے یوسف کذاب کے خلاف کیس کیا۔ مقدمہ چلا‘ اس مقدمے کے دوران یوسف کذاب کو بچانے کے لیے یہ زید حامد ہی دوڑ دھوپ کرتا رہا۔ کبھی بااثر لوگوں سے ملتا اور کبھی اخبارات میں خطوط لکھتا۔ یوسف کذاب کو عدالت نے سزائے موت سنائی، 13اگست 2000ءکو زید حامد نے روزنامہ ڈان میں ایک خط لکھا اور عدالت کے فیصلے کو انصاف کا قتل قرار دیا۔ اس کی ضمانت کی کوششیں جاری تھیں کہ ایک قیدی نے اس کو موت کے گھاٹ اُتار دیا۔ یوسف کذاب کے ختم ہونے کے بعد زید زمان حامد غائب ہوگیا۔ اور پھر صرف زید حامد کے نام سے نمودار ہوا۔ اور پھر براس ٹیکس پروگرام میں سامنے آیا۔ آج اس کے ساتھیوں میں وہی لوگ شامل ہیں جو یوسف کذاب کے ساتھی تھے۔ آج انٹرنیٹ پر اس کو سپورٹ کرنے والے اور اس کی ویب سائٹ ”براس ٹیکس“ چلانے والے یہی لوگ ہیں۔ یہ بہت اچھی اچھی باتیں کرکے لوگوں کو راغب کررہا ہے۔ یوسف کذاب نے بھی یہی کیا تھا۔ کذاب نے اس کو اپنے صحابیوں میں ابوبکر کا درجہ دیا تھا۔ زید حامد کے اصل خیالات وہی ہےں۔ آج انٹرنیٹ اور ای امیل کے ذریعے جب اس سے یوسف کذاب سے تعلق اور اس کے موجودہ نظریات کے حوالے سے سوال کیا جاتا ہے تو یہ کوئی جواب دینے کے بجائے دھمکیوں پر اتر آتا ہے۔ اللہ توبہ کرنے والوں کی توبہ قبول فرماتا ہے۔ میں نے صدق دل سے توبہ کی اور پھر ان لوگوں کے خلاف کام کیا۔ اللہ ہمیں معاف کردے اور ان دجالوں کے فتنوں سے محفوظ فرمائے۔ میری آپ سے درخواست ہے کہ آپ میرے دوست رضوان طیب کے لیے دعا کریں کہ اللہ اس کی ذہنی حالت ٹھیک کردے اور اس کو معاف فرمائے۔ آمین“ قارئین آپ نے منصور طیب اور سعد موٹن کی کہانی ان کی زبانی پڑھ لی۔ یہ لوگ آج بھی موجود ہیں۔ یوسف کذاب اور زید حامد کے ڈسے ہوئے اور بھی ہیں۔ موقع ملا تو ان کو بھی اس کالم کے ذریعے آپ سے مخاطب کرائیں گے۔ آپ کو ان سے کچھ پوچھنا ہو تو ای میل کرسکتے ہیں۔ بالمشافہ بھی مل سکتے ہیں۔ زید حامد کے یوسف کذاب سے تعلق کے ناقابل تردید شواہد بہت زیادہ ہےں۔ پھر کسی کالم میں لاہور کی عدالت میں دائر یوسف کذاب کے خلاف کیس کی سماعت کے اقتباسات درج کریں گے۔ اگر آپ اصل دیکھنا اور پڑھنا چاہتے ہیں تو اس کے لیے بھی رابطہ کرسکتے ہیں۔ اللہ ہم سب کو ہدایت دے اور دورِحاضر کے دجالی فتنوں سے بچائے۔ آمین

  3. کوئی بتلاﺅ کہ ہم بتلائیں کیا!
    ڈاکٹر فیاض عالم
    لال مسجد اور جامعہ حفصہ پر پرویزی حکومت کے دور میں کیے گئے خونیں آپریشن کے بعد امیر جماعت اسلامی محترم قاضی حسین احمد نے ایک فیکٹ فائنڈنگ کمیشن قائم کیا۔ یہ محض انکوائری کمیشن نہیں تھا بلکہ اس کے دائرہ¿ کار میں لواحقین کے ساتھ معاونت، لاپتا طلباءو طالبات کے بارے میں معلومات کا حصول، جیلوں میں بند افراد کی قانونی معاونت، سپریم کورٹ میں قانونی چارہ جوئی، جامعہ حفصہ و لال مسجد کے طلباءو طالبات سے رابطہ، اسلحہ ماہرین سے تکنیکی رپورٹس کا حصول، میڈیا سے زیادہ سے زیادہ حوالے جمع کرنا اور دلائل، شواہد اور ثبوت مہیا و مرتب کرنا جیسے مشکل ٹاسک بھی شامل تھے۔ فیکٹ فائنڈنگ کمیشن کے کنوینر ڈاکٹر فرید احمد پراچہ تھے جبکہ اس کے اراکین میں درج ذیل اراکین پارلیمنٹ شامل تھے: اسد اللہ بھٹو، مولانا عبدالمالک، مولانا شاہ عبدالعزیز، مولانا رحمت اللہ خلیل، میاں محمد اسلم، سید بختیار معانی، پرویز مسیح، کنیزعائشہ منور، سمیحہ راحیل قاضی اور بلقیس سیف۔ کمیشن نے اپنی ذمہ داری کو احسن طریقے سے نبھانے اور حقائق تک پہنچنے کے لیے مزید افراد کی خدمات حاصل کیں اور کئی ذیلی کمیٹیاں تشکیل دیں۔ ان کمیٹیوں میں محترم قاضی حسین احمد کی اہلیہ، سید بلال، رضیہ عزیز، اخلاص فاطمہ اور شاہد شمسی جیسے معتبر لوگ شامل تھے۔ قانونی و عدالتی امور کےے لیے ماہرینِ قانون توفیق آصف ایڈووکیٹ‘ شوکت عزیز صدیقی ایڈووکیٹ و دیگر وکلاءپر مشتمل کمیٹی بنائی گئی۔ فیکٹ فائنڈنگ کمیشن کے اراکین نے کئی ہفتوں کی شب و روز محنت کے بعد اپنی رپورٹ مرتب کی اور اسے نہ صرف قاضی صاحب اور متحدہ مجلس عمل کے دیگر ذمہ داران کو پیش کیا بلکہ سپریم کورٹ میں بھی اس رپورٹ کو بطور ثبوت پیش کیا گیا۔ رپورٹ ضمیمہ جات کے ساتھ کئی سو صفحات پر مشتمل تھی۔ لہٰذا کسی ایک کالم یا کئی کالموں میں بھی اس کے مندرجات کا تفصیلی احاطہ ممکن نہیں۔ چند ماہ قبل جماعت اسلامی نے اس رپورٹ کا خلاصہ عوام کے ملاحظے کے لیے کتابچے کی صورت میں شائع کیا ہے جس کو ”سانحہ لال مسجد و جامعہ حفصہ۔ قرطاس ابیض“ کا عنوان دیا گیا ہے۔ ملاحظہ فرمائیے اس کتابچے سے چند اقتباسات‘ تاکہ آپ کو اندازہ ہوسکے کہ لال مسجد اور جامعہ حفصہ میں اس خونیں آپریشن کے دوران درحقیقت کیا ہوا۔ ٭جامعہ حفصہ کی پرنسپل اور لال مسجد کے خطیب مولانا عبدالعزیز کی اہلیہ ماجدہ یونس (اُم حسان) نے سملی ڈیم ریسٹ ہاﺅس میں دئیے گئے اپنے حلفی بیان میں بتایا کہ: ” میرے اندازے کے مطابق میں مورخہ 9جولائی 2007ءکو تقریباً 1بجے دن جامعہ سے باہر آئی ہوں۔ اُس وقت جامعہ میں تقریباً 450طالبات موجود تھیں۔ اس تعداد میں بہت ساری لاوارث بچیاں بھی تھیں جو کبھی گھروں کو نہیں جاتی تھیں۔ ان میں سے اکثر بچیاں زلزلہ زدگان سے متعلق خاندانوں سے تھیں۔ ٭یہ ایک بالکل مستند بات ہے کہ جامعہ میں داخل طلباءو طالبات کے نام اور کوائف وفاق المدارس کے پاس موجود ہیں۔ ٭اگر ہم جنرل پرویزمشرف کے ہی بتائے ہوئے اعداد و شمار کے مطابق 5,000کی تعداد اور ان میں سے 3300کو بچالینے کے دعوے کو بھی بنیاد بنائیں تو سوال پیدا ہوتا ہے کہ 1700طلباءو طالبات کہاں گئے؟ ٭میڈیا کو 10جولائی کے بجائے 13جولائی کو لال مسجد اور جامعہ حفصہ میں کیوں لے جایا گیا؟ ٭میڈیا پر ہسپتالوں اور قبرستانوں کے دروازے کیوں بند کیے گئے؟ ٭عبدالستار ایدھی کے بیان کے مطابق ان سے 800کفن اور300چادریں کیوں مانگی گئیں؟ ٭گائیڈڈ ٹور کے دوران صحافیوں کو مرکزی ہال میں کیوں نہیں لے جایا گیا؟ حالانکہ وہاں سے خون اور بارود کی بو آرہی تھی۔ ٭لاشوں کے چیتھڑے بوریوں میں بھرے گئے۔ ان بوریوں کو قیدیوں والی بسوں اور ٹرکوں میں بھر کے سہالہ پولیس سینٹر میں لے جایاگیا اور فائرنگ رینج جو گیٹ نمبر3کے اندرونی طرف ہے، وہاں یہ لاشیں اور بوریاں دفن کی گئیں۔ ٭ایچ الیون قبرستان میں دفن کیے جانے والے تابوتوں میں دو دو لاشوں کی موجودگی کو میڈیا کے افراد نے خود دیکھا۔ ٭مولانا عبدالرشید غازی شہید میڈیا کے سامنے خود بھی 14کلاشنکوفوں کی موجودگی کا اعتراف کرتے رہے۔ یہی کلاشنکوفیں متعدد مرتبہ طلباءکے ہاتھوں میں دیکھی گئیں۔ ہم نے تحقیقات کے دوران متعدد طلباءو طالبات سے کئی انداز سے سوالات کیے لیکن کسی بھی طرح مذکورہ بالا کلاشنکوفوں کے علاوہ کسی دیگر اسلحے کی موجودگی کی تصدیق نہیں ہوسکی۔ ٭جس اسلحے کی 14جولائی 2007ءکو میڈیا کے سامنے نمائش کی گئی، جب ہم نے اس کے تجزیے کے لیے اسلحہ ماہرین سے رجوع کیا جن میں ریٹائرڈ جرنیل حضرات بھی شامل تھے، تو ان کے اٹھائے ہوئے نکات درج ذیل تھے: i۔اس اسلحے میں ٹینک شکن ہتھیار بھی شامل تھے۔ حالانکہ مسجد کے اندر ٹینکوں کے داخل ہونے کا امکان صفر فیصد بھی نہیں تھا۔ اس لیے ٹینک شکن ہتھیاروں کو سجانے سے بھی واضح ہوجاتا ہے کہ یہ اسلحہ لال مسجد والوں کا نہیں بلکہ کسی آرمی ڈپو سے لاکر سجایا گیا ہے۔ ii۔کچھ ہتھیار اس طرح سے پالش شدہ تھے کہ وہ بھی کسی محفوظ مال خانے سے لائے گئے معلوم ہوتے ہیں۔ میدانِ جنگ سے اٹھایا گیا اسلحہ اس طرح سے چمکتا دمکتا نہیں ہے۔ iii۔اتنی زبردست فائرنگ اور آتش زدگی میں بھی صحافیوں کو دکھانے کے لیے پٹرول بم بچ گئے۔ جھوٹ بولنے کے لیے بھی عقل چاہیے۔ iv۔اسنائپر رائفلوں اور لائٹ مشین گنوں سے نیچی پرواز کے حامل بغیر پائلٹ کے جاسوسی طیارے کو گرایا جاسکتا ہے۔ طلباءنے انہیں گرانے کی کوشش کیوں نہیں کی؟ یہ سوالات (میں نے صرف چند سوالات لکھے ہیں) اس گمان کو یقین میں بدل دیتے ہیں کہ میڈیا کے سامنے دکھایا جانے والا اسلحہ خود سیکورٹی فورسز کی طرف سے آپریشن ختم ہونے کے بعد مدرسہ اور مسجد میں منتقل کیا گیا۔ ٭بڑے پیمانے پر یہ بات پھیلائی گئی کہ جنگجوﺅں نے طالبات اور بچوں کو یرغمال بناکر رکھا ہے۔ ہماری ملاقاتیں آخری دن تک باہر آنے والی طالبات سے بھی ہوئیں۔ کوئی ایک بھی شہادت نہیں ملی کہ کسی نے ان کو زبردستی روک رکھا تھا۔ یہ سب طلباءو طالبات بلکہ ان کے والدین بالخصوص مائیں جذبہ¿ جہاد اور شوقِ شہادت سے سرشار تھے۔ ٭بتایا گیا کہ اندر جنگجو اور خطرناک دہشت گرد موجود ہیں جو بڑے تربیت یافتہ ہیں‘ لیکن بعد میں شہید اور زخمی ہونے والوں میں کوئی ایک بھی تربیت یافتہ دہشت گرد نہیں نکلا۔ یہ سب تو جامعہ کے ہی طلباءو طالبات تھے۔ ٭کہا گیا کہ اندر خودکش حملہ آور موجود ہیں اور چودہ خودکش حملہ آوروں کو بیلٹ تقسیم کردی گئی ہیں۔ بالآخر ثابت ہوا کہ اندر کوئی خودکش حملہ آور موجود نہیں تھا اور نہ ہی حکومت میڈیا کو کوئی بیلٹ دکھا سکی۔ یہ داستان بھی مخصوص مقاصد کے تحت پھیلائی گئی۔ ٭لیگل ایڈ کمیٹی نے یہ بھی نوٹ کیا کہ گرفتار شدگان میں سے زخمیوں کو بازوﺅں کے نیچے اور ٹانگوں پر سامنے سے گولیاں لگی ہیں۔ گویا کہ جب یہ طلباءدونوں ہاتھ اوپر اٹھائے ہوئے باہر نکل رہے تھے تو ان کو شیردل جوانوں نے انتہائی بے رحمی سے گولیاں ماریں۔ ٭یہ حقیقت ہے کہ عبدالرشید غازی شہید نے بے مثال اور لازوال قربانی دی۔ جس دھج سے وہ مقتل میں گئے وہ شان ہمیشہ سلامت رہے گی۔ انہوں نے جن اعلیٰ مقاصد کے لیے آواز بلند کی وہ بھی ہمیشہ زندہ و تابندہ رہیں گے۔ سانحہ لال مسجد و جامعہ حفصہ سے متعلق جماعت اسلامی کے اعلیٰ سطحی کمیشن کی رپورٹ کے اقتباسات آپ نے ملاحظہ فرمائے۔ اب اس سانحے سے متعلق اس عظیم مرد ِ مومن کی رپورٹ کے مندرجات کے کچھ حصوں کا ترجمہ ملاحظہ فرمائیے جنہوں نے آج کل خواتین و حضرات کو اپنی گفتگو اور بے لاگ تجزیوں سے مسحور کررکھا ہے۔ جن کے مشن کو بعض لوگ جماعت اسلامی کا مشن قرار دیتے ہیں اور جن کے بارے میں بعض معصوم ترین لوگوں کا خیال ہے کہ اللہ تعالیٰ ان سے کام لے رہا ہے۔ درحقیقت ان سے کون، کیا کام لے رہا ہے، میرے خیال میں درج ذیل اقتباسات پڑھ کر آپ کو اچھی طرح اندازہ ہوجائے گا: سانحہ لال مسجد کے بعد براس ٹیک نے زید حامد کی انگریزی میں مرتب کردہ رپورٹ What Really Happened کے عنوان سے جاری کی۔ رپورٹ کے آغاز میں انہوں نے اپنی 8جولائی کی تحریر کا حوالہ دیتے ہوئے لکھا ہے کہ : ”(لال مسجد کے معاملے میں) حکومت کی ناموری، ستائش اور تذلیل کے درمیان ایک پاگل مولوی (Psychopath Cleric) اور دہشت گردوں کا ایک گروپ کھڑا ہے جس نے لوگوں کو پاکستانی دارالحکومت کے قلب میں یرغمال بنایا ہوا ہے۔“ (رپورٹ اس طرح کے زہریلے الفاظ اور تجزیوں سے پُر ہے)۔ ٭اگلے صفحات میں موصوف فرماتے ہیں کہ: ”یہ گروپ (لال مسجد کے علماءاور طلباءو طالبات) منکرِ دین، بے وفا، فراری، اوباش (Renegade) جنگجوﺅں کا گروپ ہے جو ’تکفیری‘ کہلاتے ہیں۔ یہ ان مسلمانوں پر جنگ مسلط کردیتے ہیں جو ان کے نظریات سے اتفاق نہیں کرتے۔ یہ نظریاتی طور پر حکومت دشمن، بدنظمی پسند، انتشاری اور شورش طلب (Anarchist) اور معروف جہادی گروپس کے درمیان بے خانماں اور خارجی (Outcastes)لوگ ہیں۔ ٭میرے خیال میں (سانحہ میں) ہلاک و زخمی ہونے والوں کی کل تعداد 200سے 250 ہوسکتی ہے بشمول 75جنگجوﺅں کے۔ اس تعداد کو حکومت نے بھی تسلیم کیا ہے۔ ملا دباﺅ بڑھا رہے ہیں یہ منوانے کے لیے کہ اندر 1000لوگ تھے۔ یہ بے معنی اور فضول بات ہے۔ جیسا کہ ان کے مرحوم لیڈر کہتے رہے کہ اندر 1800لوگ ہیں، یہ Bluffتھا۔ ٭جی ہاں۔میڈیا کو جو ہتھیار دکھائے گئے، ان کا تعلق ان جنگجوﺅں سے تھا، اور ان عمارتوں میں اسلحے کا بہت بڑا ذخیرہ موجود تھا جن میں مشین گنیں، راکٹ لانچرز، بارودی سرنگیں، ہینڈ گرنیڈز، گیس ماسک، مولوٹوو کوک ٹیلز اور خودکش حملے کی جیکٹس شامل تھیں۔ ہمیں کوئی شبہ نہیں کہ اس معاملے میں حکومتی مو¿قف بالکل درست ہے۔ لال مسجد ایک عارضی اسلحہ خانہ (Weapons Dump) تھی اور بلاشبہ ایک طویل جنگ اور مسلح بغاوت (Armed Rebellion) کے لیے تیار مقام۔ ٭باوجود اس کے، کہ مولوی مُصر ہیں کہ مدرسے میں 1000سے زائد ہلاکتیں ہوئیں، ہمارے پاس اس بات کو تسلیم کرنے کی کوئی وجہ نہیں۔ یہ محض بڑے پیمانے پر پھیلائی جانے والی ڈس انفارمیشن ہے۔ کوئی ایک، جی ہاں کوئی ایک بھی کسی ثبوت کے ساتھ آگے نہیں آیا جس میں مدرسے میں داخل طلباءو طالبات کے نام، رول نمبر اور پتے درج ہوں۔اور نہ ہی کوئی حاضری رجسٹر پیش کیا گیا جس سے پتا چل سکے کہ مدرسے میں داخل طلباءو طالبات کی اصل تعداد کیا تھی۔ ٭ہمارے اپنے ذرائع سے حاصل کردہ مفصل شہادتیں موجود ہیں جن سے پتا چلتا ہے کہ آپریشن کے دوران صرف چند سویلین (خواتین اور بچوں) کی ہلاکتیں ہوئیں۔ شاید صرف چند درجن۔ اس تعداد کو حکومت نے بھی اب تسلیم کرلیا ہے۔ مجھ میں حوصلہ نہیں کہ اس رپورٹ سے مزید اقتباسات آپ کی خدمت میں پیش کرسکوں۔ آخری حصے میں موصوف سیاسی رہنماﺅں کے بارے میں رقمطراز ہیں کہ ہماری حزب اختلاف پریشان اور گھبرائے ہوئے مسخروں کا گروپ ہے۔ The opposition is still a confused bunch of comedians. Their APC in London only blew hot air. یاد رہے کہ لندن میں منعقد ہونے والی آل پارٹیز کانفرنس میں محترم قاضی حسین احمد اور لیاقت بلوچ صاحبان بھی شریک تھے۔جنرل (ریٹائرڈ) پرویز مشرف کے حکم پر کیا جانے والا لال مسجد آپریشن پاکستان کی تاریخ کے اہم ترین سانحات میں سے ایک تھا۔ شہید ہونے والے طلباءو طالبات اور ان کے اہلِ خاندان و پاکستان کے عوام اسے تادیر نہیں بھلا پائیں گے۔ بعض لوگ ملک میں ہونے والے خودکش حملوں کے پیچھے بھی سانحہ لال مسجد کے ردِعمل کو محسوس کرتے ہیں۔ اس سانحے کے حوالے سے جماعت اسلامی کے اعلیٰ سطحی کمیشن کی رپورٹ اور زید حامد کی رپورٹ ایک دوسرے کی ضد ہیں۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ ان میں سے ایک رپورٹ دروغ گوئی کا شاہکار ہے اور مخصوص ایجنڈے کے تحت جاری کی گئی ہے۔ یہ رپورٹ کون سی ہے، اس کا فیصلہ کرنا مشکل نہیں ہے۔ کون کس کے ایجنڈے پر ہے، یہ سمجھنا بھی بہت آسان ہے۔ اس کے باوجود کچھ لوگ: پوچھتے ہیں زید حامد کون ہے ”کوئی بتلاﺅ کہ ہم بتلائیں کیا

  4. گزشتہ دنوں ایک شخص زید حامد کے بارے میں جسارت میں مضامین شائع ہوئے‘ جن پر ہمارے کچھ قارئین بالخصوص خواتین کے طبقے نے اعتراضات کیے۔ اعتراضات کرنے والوں میں ایسے بھی تھے جن کی دینی فہم اور اسلام سے محبت مستحکم ہے، لیکن لاعلمی کی بنیاد پر اعتراضات وارد کیے گئے۔ حقیقت یہ ہے کہ زید حامد کا سحر سر چڑھ کر بول رہا ہے۔ ٹی وی چینلز پر بہت اچھی گفتگو کرتے ہیں‘ ایسی گفتگو کہ دین دار طبقہ کہہ اٹھے کہ یہ تو اس کے دل کی آواز ہے۔ زبان کا ایسا ہی کمال ”جاہل آن لائن“ میں بھی نظر آتا ہے۔ خطابت کے زور پر ذہنوں کو مسحور کرنا کوئی نئی بات نہیں۔ بھلا ہو ڈاکٹر فیاض عالم کا‘ جنہوں نے انکشاف کیا کہ زید حامد جھوٹے نبی یوسف کذاب کے خلیفہ تھے۔ لیکن شاید جسارت کے کئی قارئین نے اس پر توجہ نہیں دی۔ یوسف کذاب کا دعویٰ ¿ نبوت اور اس کا انجام زیادہ پرانی بات نہیں۔ اسے لاہور کی عدالت نے سزائے موت دی تھی اور زید حامد نے نہ صرف فیصلے کی مخالفت کی بلکہ اس کی ضمانت کی کوشش بھی کرتے رہے‘ مگر اسے کسی غیرت مند نے جیل میں ہی موت کے گھاٹ اتار دیا۔ زید حامد نے جھوٹے نبی کی اطاعت سے توبہ کا اعلان نہیں کیا۔ وہ توبہ کرلیں تو ہمارے سر آنکھوں پر، لیکن تب تک اُن سے متاثر ہونے والے ان کا پس منظر اپنے ذہن میں رکھیں۔ یوسف کذاب کون تھا، یادداشت تازہ کرنے کے لیے اس پر چلنے والے مقدمے کی تھوڑی سی روداد بیان کرنا مناسب ہوگا تاکہ زید حامد کا پس منظر بھی تھوڑا سا سامنے آجائے۔ سیشن جج لاہور کی عدالت میں چلنے والے اس اہم مقدمے کی پوری تفصیل ایک کتابی شکل میں شائع ہوچکی ہے جس کا عنوان ہے:”Judgment of yousuf kazzab blasphemy case” اسے جناب ارشد قریشی نے مرتب کیا ہے اور اس کاپیش لفظ سپریم کورٹ کے سینئر ایڈووکیٹ محمد اسماعیل قریشی نے لکھا ہے۔ قریشی صاحب ہی نے یوسف کذاب کے خلاف مقدمہ کی پیروی کی تھی جس کے نتیجے میں 5 اگست 2000ءکو جج میاں محمد جہانگیر نے مجرم کذاب کو موت کی سزا سنائی۔ اس فیصلے کو انہی زید حامد نے انصاف کا قتل قرار دیا۔ ان کے خیال میں توہینِ رسالت کا مرتکب اور خود نبوت کا دعویدار، اپنے دور کا کذاب ِعظیم ایک معزز صوفی اسکالر تھا۔ اب بھی وقت ہے کہ زید حامد یوسف کذاب سے برا¿ت کا اعلان کریں، جس نے بے شمار لوگوں کو اپنی خطابت کے سحر سے گمراہ کیا۔ اب آپ محمد اسماعیل قریشی کے قلم سے مقدمہ کی مختصر سی روداد اور تبصرہ ملاحظہ کریں۔ اللہ ہم سب کو دجالوں اور ابو جہل کے پیروکاروں سے محفوظ رکھے: …………٭٭………… میں فاضل سیشن جج لاہور میاں محمد جہانگیر کے تفصیلی فیصلے مجریہ 5 اگست 2000ءپر تبصرہ کرتے ہوئے جھجک رہا تھا جس میں فاضل جج نے یوسف علی کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی توہین کے جرم میں موت کی سزا دی ہے جب اس نے مدینہ منورہ سے اپنی واپسی پر نبوت کی آخری اور حتمی منزل طے کرلینے کا دعویٰ کیا تھا۔ مجرم کو سزائے موت کے ساتھ ساتھ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے نام پر دھوکا اور جعلسازی کے گھناﺅنے جرم کے ارتکاب کی سزا بھی دی گئی ہے۔ اس کو بلند مرتبت اہلِ بیت (علیہ السلام) اور صحابہ کرامؓ کا تقدس مجروح کرنے کی سزا بھی دی گئی۔ دوسرے یہ کہ میں نے اس پر کوئی تبصرہ کرنے سے اس لیے بھی گریز کیا کہ میں اس فیصلے کا حصہ ہوں اور میری کتاب ”ناموسِ رسالت اور قانون توہین ِ رسالت“ کا حوالہ مجرم نے مقدمے کی سماعت کرنے والی عدالت کے سامنے بار بار دیا۔ دریں اثناءمجرم کے ایک نام نہاد صحابی زید حامد نے ڈان شمارہ 13 اگست 2000ءمیں فیصلے کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کیا اور شر انگیزی کی اس پست ترین سطح تک گرگئے کہ اس فیصلے کو انصاف کا قتل قرار دے دیا اور مجرم کو ایک مہربان اور اسلام کے معزز صوفی اسکالر کے طور پر پیش کیا ہے۔ فیصلے کے بارے میں تبصرے سے ظاہر ہوتا ہے کہ قانون کے بارے میں تبصرہ نگار کا علم کس قدر سطحی ہے۔ ان کے بیان کردہ حقائق سچائی کا مذاق اڑانے کے مترادف ہیں۔ اسی طرح ڈیلی نیوز لاہور میں اسی دن شائع ہونے والے مجرم کے بیان میں بھی مقدمے کے اصل متن کو مسخ کیا گیا ہے۔ اس گمراہ کن مہم نے مجرم کے ایک سابق قریبی ساتھی اور اسکالر جناب ارشد قریشی کو جو قادریہ صوفی سلسلے سے تعلق رکھتے ہیں‘ فاضل سیشن جج کا مقدمہ کتابی شکل میں شائع کرنے پر مجبور کردیا تاکہ عوام مجرم کا اصلی روپ اس تاریخی مقدمے کی روشنی میں دیکھ سکیں۔ انہوں نے مجھ سے اپنی اس زیرِ طبع کتاب کے لیے پیش لفظ لکھنے کی درخواست کی۔ اس کتاب کے مو¿لف ایک اور کتاب ”فتنہ یوسف کذاب“ کے مصنف بھی ہیں جو تین جلدوں میں ہے۔ نہ صرف مقدمے کی سماعت کرنے والے فاضل جج بلکہ خود میرے اور ممتاز وکلا سردار احمد خان، ایم اقبال چیمہ، غلام مصطفی چوہدری، یعقوب علی قریشی اور میاںصابر نشتر ایڈووکیٹ پر مشتمل میرے پینل کے خلاف مجرم کی مسلسل ناجائز مہم جوئی کے پیش نظر میں نے یہ پیش لفظ لکھ کر عوام پر یہ بات واضح کرنا ضروری سمجھا کہ آدھا سچ صریح جھوٹ سے بھی زیادہ خطرناک ہے۔ جج صاحبان خود اپنے فیصلوں کا دفاع نہیںکرسکتے بلکہ وہ اپنے فیصلوں کے ذریعے کلام کرسکتے ہیں۔ اس لیے جو معاملہ عدالت سے تعلق رکھتا ہے تو عدالت خود ہی اس توہین آمیز مواد پر گرفت کرے گی لیکن میں صرف مدعی کے وکلا کی اس کردارکشی کو زیربحث لاﺅں گا جو بعض اخبارات کے ذریعے کی گئی ہے۔ جہاں تک مجرم کے طرزعمل اور کردار کا تعلق ہے تو اس نے عدالت میں پیش کردہ خود اپنی دستاویزات کے ذریعے ہی اپنی اصلیت ثابت کردی ہے کہ جدید مشینی طریقوں کے ذریعے انسانی ذہن اتنے بڑے فراڈ کو شاید ہی کبھی احاطہ¿ خیال میں لاسکا ہو۔ اس نے ایک دستاویز پیش کی جسے مقدمے کی سماعت کرنے والی عدالت نے سند ڈی 1 کے طور پر پیش کیا ہے اور جو اس کتاب کے شیڈول Iکا حصہ بھی ہے۔ اس دستاویز کے بارے میں اس لیے یہ دعویٰ کیا ہے کہ یہ وہ سرٹیفکیٹ ہے جو رسول اللہصلی اللہ علیہ وسلم نے اس کو براہِ راست بھیجا ہے جس کی رو سے اس کو خلیفہ اعظم قرار دیا گیا ہے۔ میری جرح پر اس کے اعتراف کے مطابق تمام انبیاءکرام کو خلفائ‘ زمین پر اللہ کے نائب مقرر کیا گیا تھا اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم خلیفہ اعظم، نائبین کے سربراہ اعلیٰ ہیں‘ لہٰذا اس سرٹیفکیٹ کی رو سے اب وہ زمین پر خلیفہ اعظم ہے۔ جرح میں اس نے یہ بات بھی تسلیم کی کہ چاروں خلفاءمیں سے کوئی بھی خلیفہ اعظم کے مرتبے پر فائز نہیں تھا۔ ایک سوال کے جواب میں اس نے کہا کہ رسول اللہصلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے خلیفہ اعظم کا یہ سرٹیفکیٹ اس کو کراچی کے ایک بزرگ عبداللہ شاہ غازی کی وساطت سے ان کے لیٹر پیڈ پر کمپیوٹر کے ذریعے بھیجا گیا تھا۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ کراچی کے مذکورہ بزرگ 300 سال قبل وفات پاچکے ہیں۔ نبی کریم کی جانب سے انگریزی زبان میں مذکورہ سرٹیفکیٹ میں مجرم کو خلیفہ اعظم حضرت امام الشیخ ابو محمد یوسف کے طور پر مخاطب کیا گیا ہے۔ مذکورہ سرٹیفکیٹ میں مجرم کو علم کا محور اور عقل و دانش میں حرف ِآخر قرار دیا گیا ہے۔ اس اعلان کی وضاحت کرتے ہوئے مجرم نے کہا کہ وہ قرآن پاک کا مفسر ہے۔ وہ حدیث اور فقہ کے بارے میں سب کچھ جانتا ہے۔ وہ تصوف کا ماہر ہے اور دنیاوی سائنسی علوم سے بھی واقف ہے۔ اس کے ہمہ جہت علم و دانش کا اندازہ لگانے کی غرض سے میں نے اس سے دینی علم کے بارے میں جرح کی اور جدید سائنسی تحقیق کے بارے میں بھی سوالات پوچھے۔ میں یہاں بتانا چاہوں گا کہ مجرم نے عدالت میں یہ بیان دیا تھا کہ اس کو تمام پیغامات براہِ راست رسول اللہصلی اللہ علیہ وسلم سے عربی یا انگریزی میں موصول ہوتے ہیں۔ میں نے اس سے قرآنی لفظ ”تقویٰ“ کی دلیل کے بارے میں سوال کیا لیکن وہ اس کا جواب نہیں دے سکا۔ میں نے اس سے خلیفہ اعظم سرٹیفکیٹ کی پیشانی پر تحریر الفاظ ”وسعت“ اور ”حشر“ کے معنی پوچھے مگر وہ ان الفاظ کے آسان معنی بتانے میں بری طرح ناکام رہا۔ یہاں تک کہ وہ صحاح ستہ کے نام سے مشہور اور قرآن کے بعد پوری دنیا کے لیے انتہائی محترم حدیث کی چھ کتابوں کے نام بتانے سے بھی قاصر رہا۔ آل رسول کا دعویدار ہونے کے باوجود اس کو رسول اللہصلی اللہ علیہ وسلماور حضرت علی ؓ کے بارے میں مدینتہ العلم کی انتہائی مشہور حدیث کا بھی کوئی علم نہیں۔ اسکول سرٹیفکیٹ اور اس کے سروس ریکارڈ کے مطابق اس کا نام یوسف علی ہے۔ (شیڈول II) ریٹائرمنٹ کے بعد اس نے لوگوں کو دھوکا دینے اور نبی کریم کے نام پر جعلسازی کے ذریعے بے تحاشہ پیسہ حاصل کرنے اور لاکھوں روپے مالیت کی جائداد بنانے کے مذموم مقاصد کے پیش نظر اپنے نام میں ”محمد“ کا اضافہ کرلیا۔ یہ حقائق اس کے اپنے اعترافات اور پیش کردہ دستاویزات سے ثابت ہیں ۔ اس کا دعویٰ ہے کہ اس نے اقبال کا گہرا مطالعہ کیا ہے‘ لیکن وہ ان کے 6 خطبات سے نابلد ہے اور ان کی شاعری میں استعمال ہونے والی اصطلاحات کا مطلب جانتا ہے نہ ہی وہ اقبال کے فلسفہ¿ خودی کی وضاحت کرسکا۔ اس کا مولانا مودودی کے ساتھ منسلک رہنے کا دعویٰ بھی صریح غلط بیانی پر مبنی ہے اور جماعت اسلامی کی طرف سے اس کی تردید کی جاچکی ہے۔ اسی طرح وہ جدید سائنس کی الف، ب بھی نہیں جانتا اور ڈی این اے کا مطلب نہیں بتا پایا۔ اس نے یہ لفظ عدالت کے سامنے خود اپنے بیان میں استعمال کیا تھا۔ اپنے اس مذموم منصوبے کو تقویت بخشنے کی غرض سے اس نے نوجوانوں کی عالمی تنظیم ورلڈ اسمبلی آف مسلم یوتھ (WAMY) کا ڈائریکٹر جنرل ہونے کا دعویٰ کیا تھا جس کا صدر دفتر جدہ میں ہے اور جس کے دفاتر پوری دنیا میں پھیلے ہوئے ہیں۔ میں اس تنظیم کا ایسوسی ایٹ ممبر رہا ہوں لہٰذا میں نے فوری طور پر سیکریٹری جنرل ڈاکٹر مانج الجہنی سے رابطہ قائم کیا تو انہوں نے فوراً ہی فیکس کے ذریعے مجھے آگاہ کیا کہ ”وامی“ یوسف علی نام کے کسی شخص سے واقف نہیں ہے اور نہ ہی اس نام کے کسی شخص کو کبھی ڈائریکٹر جنرل مقرر کیا گےا تھا۔ مذکورہ خط میں واضح طور پر کہا گیا کہ اگر مذکورہ یوسف علی نے اپنا دعویٰ ثابت کرنے کے لیے کوئی دستاویز یا کوئی دوسرا مواد پیش کیا ہو تو اسے غلط اور جھوٹ تصور کیا جائے۔ سیکریٹری جنرل وامی نے اس کے خلاف قانونی کارروائی کرنے اور سزا دلانے کا اختیار بھی دیا۔ مذکورہ خط عدالت میں پیش کیا گیا اور یہ بھی شیڈول III کے طور پر منسلک ہے۔ مجرم نے اس جعلسازی پر ہی اکتفا نہیں کیا بلکہ اس نے خود کو سعودی عرب سے قبرص کے سفیر کے مرتبے پر بھی فائز کردیا اور ہزایکسیلنسی بن کر سابق چیف جسٹس حمودالرحمن اور جسٹس (ر) محمد افضل چیمہ کے ساتھ اپنی تصویر بھی کھنچوائی۔ (شیڈول IV)۔ تاہم جسٹس چیمہ نے اسلام آباد سے ٹیلی فون پر میرے استفسار پر ایسے کسی ہز ایکسیلنسی سے واقفیت کی تردید کی۔ مجرم نے اپنے بیان میں اس بات سے انکار کیا کہ وہ مرزا غلام احمد قادیانی کو جانتا ہے۔ مگر حقیقت یہ ہے کہ اس نے بھی وہی طریقہ کار اختیار کیا جو قادیان کے اس مرزا نے اختیار کیا تھا۔ یہاں یہ بتانا ضروری ہے کہ برطانوی حکومت نے بھارت کے مسلم حکمرانوں سے اقتدار غصب کرنے کے بعد انیسویں صدی میں توہینِ رسالت کا قانون منسوخ کردیا‘ جبکہ انگلینڈ میں اُس وقت بھی یہ قانون آئین کا حصہ تھا۔ مرزا غلام احمد کو برطانوی حکومت کی طرف سے اسلام کے لبادے میں اپنے نئے مذہب کی مکمل حمایت حاصل تھی۔ لیکن اپنے آقاﺅں کی اس یقین دہانی کے بعد کہ برطانوی حکومت اس کے خلاف کسی بھی مذہبی تحریک کو پوری سختی سے کچل دے گی اس نے یہ اعلان کردیا کہ جو کوئی بھی اس پر ایمان نہیں لائے گا وہ دائرہ¿ اسلام سے خارج ہوجائے گا۔ اس کا یہ اعلان مکتوبات مطبوعہ مارچ 1906ء(شیڈولVI) میں موجود ہے۔ اس پس منظر کے ساتھ مجرم یوسف علی بھی مرزا غلام احمد کے نقش قدم پر چلا اور اس نے زبانی اور دستاویزی شہادت کے ذریعے یہ ثابت کردیا کہ وہ بھی اپنے مشن اور نبوت کے جھوٹے دعویدار کا حقیقی جانشین ہے۔ پہلے اس نے مذہبی حلقوں میں اسلام کے مبلغ کی حیثیت سے رسائی حاصل کی، پھر مرد ِ کامل، اس کے بعد امام الوقت یعنی مہدی ہونے کا دعویٰ کیا اور پھر خود کو خلیفہ اعظم قرار دے دیا۔ پھر اس نے ”غار حرا“ سے موسوم اپنے بیسمنٹ میں اپنے پیروکاروں کے سامنے اپنے نبی ہونے کا اعلان کردیا۔ وہ مرزا غلام احمد کی طرح اپنے اس جھوٹے دعوے پر بھی مطمئن نہیں ہوا اور اس نے خود کو نبی آخرالزماں سے (نعوذ باللہ) برتر ہستی ظاہر کرنے کے لیے یہ اعلان کردیا کہ 1400 سال قبل رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلمایک فریضہ سرانجام دے رہے تھے مگر دور حاضر میں اس نے نبوت اور اس کے حسن کو عروج کمال پر پہنچا دیا ہے۔ مجرم کے اس شرانگیز اور اشتعال انگیز دعوے کے ثبوت میں استغاثہ نے 14 گواہ پیش کیے جن میں کراچی سے بریگیڈیئر (ر) ڈاکٹر محمد اسلم (گواہ استغاثہ1)، محمد اکرم رانا (گواہ استغاثہ2 )‘ محمد علی ابوبکر (گواہ استغاثہ7) اور لاہور سے حافظ محمد ممتاز عدانی، (گواہ استغاثہ نمبر4)‘ میاں محمد اویس (گواہ استغاثہ5) شامل تھے جنہوں نے مجرم کی جانب سے نبوت اورختمی فضیلت کے جھوٹے دعوے کی براہِ راست عینی شہادتوں پر مبنی واقعات بیان کیے۔ سماجی اور مذہبی مرتبے کے حامل ان گواہوں کے ساتھ مجرم کی کوئی عداوت نہیں ہے۔ اس کے برعکس یہ لوگ اس کے اندھے عقیدت مند اور پیروکار تھے‘ بالخصوص محمد علی ابوبکر تو اس سے اتنا قریب تھا کہ اسے مجرم آقا سے مکمل وفاداری اور اس کے احکام کی تعمیل اور بھرپور اطاعت کی بناءپر ابوبکر صدیق کا خطاب دیا گیا تھا۔ کراچی کے اس مرید نے اس کو لاکھوں روپے مالیت کے چیک اور ڈرافٹ دیئے اور اس کے لیے آراستہ و پیراستہ محل تعمیر کیا جس میں غار حرا بھی بنایا گیا تھا۔ مجرم نے نقد یا چیک اور ڈرافٹ کی شکل میں رقم وصول کرنے کی حقیقت سے انکار نہیں کیا۔ اپنے اس نام نہاد نبی کے حق میں اپنی تمام جائداد سے دستبردار ہونے پر اس کے صحابی کو صدیق کا خطاب عطاکیاگیا تھا۔ اس طرح مجرم نے رسول پاک کے نام پر معصوم لوگوں کو اپنے جال میں پھنسایا اور انہیں مفلسی اور محتاجی سے دوچار کردیا۔ جب اس نے اپنے خلاف مسلمانوں کے غیظ وغضب اور شدید اشتعال کی کیفیت دیکھی تو اپنی گردن بچانے کے لئے مرزا غلام احمد قادیانی کی طرح وہ بھی اپنے دعوے سے مکر گیا۔ اس کی تردید صریح دجل وفریب اور ”محمد“ ”آل رسول“ اور ”صحابہ“ کے مقدس الفاظ کی غلط ترجمانی کی عکاس تھی جیسا کہ ریکارڈ سے ظاہر ہے۔ یوسف علی نے مسلمان ہوکر بھی اپنے مذموم مقاصد کے لئے لوگوں کو دھوکا دینے اور مال ودولت اور جائداد کی خاطر رسول پاک صلی اللہ علیہ وسلم کے نام پر معصوم لوگوں کو اپنے جال میں پھنسانے کے لےے توہین رسالت کے سنگین جرم کا ارتکاب کیا۔

  5. reg:zaid hamid ..

    1)complete book on yousuf kazzab and
    2)speach of yousuf ali praising zaid zaman hamid

    ملاحظہ کیجئیے
    http://www.esnips.com/web/completebookfitnayousufkazzabzaidzaman

    فتنہ ء یوسف کذاب پر یہ مکمل دستاویز ہے جو 1997 مین شائع ہوئی تھی۔ اس کی اہمیت اب بھی ہے۔ بالخصوس زید زمان حامد کے ہاتھوں دوبارہ اس گروہ کی تنظیم اور ٹی وی ون پر اسلامی اسکالر اور ماہر دفاع کے طور پر طاقتور حلقوں کے تعاون سے ابھارے جانے کے بعد اس کی اہمیت بڑھ گئی ہے۔

    یوسف کذاب کے کیس کا فیصلہ نامی انگریزی کتاب کا دیباچہ اسماعیل قریشی ایڈووکیٹ نے لکھا۔یہ کتاب بھی 2000 مین شائع ہوئی۔دیباچہ کا اردو ترجمہ ملاحظہ کیجیئے۔زید حامد صاحب اس میں بھی موجود۔۔۔یاد رہے 2000 سے

    چلئے صاحب جن کو یوسف صاحب کی آواز سنے بغیر یقین نہیں آ رہا تھا کہ وہ اپنے ساتھیوں(زید حامد) وغیرہ کو صحابی کہتا تھا۔اب اس کی اور زید حامد کی تقریر سن لیں ۔ جو فروری 1997 میں بیت رضا لاہور میں نام نہاد “ورلڈ اسمبلی” بلا کر کی گئی۔یوسٍف کذاب نے زید زمان حامد کو صحابی کہہ کر بلایا اور زید بے غیرتی کی آخری حدوں کو چھو کر یوسف علی کی تعریفیں کرتا رہا۔ یہ تقریر سیشن کورٹ لاہور میں سنی اور جرح کی گئی اور کورٹ ریکارڈ میں محفوظ ہے۔
    اب سنیے پہلے یوسف علی کو،پھر عبدالواحد کو اور پھر زید زمان کو ۔
    انا للہ وانا الیہ راجعون
    Here is the audio recording of the speech of Yousuf Kazzab and Zaid Zaman Hamid delivered in a “world assembly” held at “bait e raza” Lahore in February 1997.yousuf announces Zaid Zaman(ZZ Hamid) as “Sahabi”. Zaid Zaman Hamid in response praises him.
    The audio was presented and testified in session court Lahore

    http://www.esnips.com/web/audiospeachbaiterazayousufaliandzaidzaman

    plz also see

    theajmals.com

    teeth.com.pk

    http://www.dictatorshipwatch.com

    for disussions

  6. Earlier we have been discussing here about the private TV show ‘Brasstacks’ by Zaid Hamid or Zaid Zaman Hamid in two topics “Zaid Hamid Responds” and Brasstacks, Zahid Hamid: A fake Khalipha II?.

    There has been a lengthy debate on issue and both side including his employee and aide Kashif Sheraz, presented their view far and against Zaid Hamid. None of the views were censored or deleted in order to provide an equal opportunity to both sides. We have also contacted Mr. Zaid Himd and requested to respond to these allegations against him; his e mail response (posted in Zaid Hamid Responds) was nothing more then irrelevant and swears against people who exposed him initially.

    Some members have already posted ‘Court Judgments’, ‘References from Books’ and ‘evidence of people’ who were misguided by Yousaf Kazab’s cult, each associating Zaid Zaman Hamid to be Khalifah and Sahabi of fake Prophet. Also his nominated Khalifah and present head of the cult.

    However an audio tape of Kazab Yousaf which was presented in court which sentenced Kazb to death, in which he claimed himself to be ‘Prophet’ and Zaid Hamid as his ‘Sahabi’ remained unavailable. The supporters of Zaid Hamid were insisting that no such tape exists.
    Today a member of this blog Mr. Ahmad Hamza has posted the much sought tape.

    The link states:

    “Here is the Evidence about Zaid Zaman Hamid’s murshid yousuf kazzab.A speach delievered in ‘Bait e Raza Lahore’ in a so called world assembly. Yousuf kazzab announces Zaid Zaman Bamid of Brasstacks as his “sahabi” and Zaid Zaman praises Yusuf in response”.
    Apart from claiming to be a fake prophet, the Yousaf kazab Cult is believed to be involved in;

    1. Recruting educated female members and raping them,

    2. Preaching his followers to present their wife to Yousaf Kazab and his associates,

    3. Sex with ‘female followers’ of well to do educated families and later blackmailing them;

    4. Extorttion of moeny under religious and emotional expliotation;

    5. A father of a girl from a well known ‘Induatrialist’ family filed a suit in family court Karachi to get divorce for his daughter who was ‘presented’ to Kazab yousaf by her misguided follower, as close associate of Zaid Hamid and Kazab Yousaf. That too is part of court record and details published in a book ‘Fitna Yousaf Kazab’.

    Similarly, several controversies surrounds Mr. Zaid Hamid and his speehes, specially when he started a campaign against Banking System in Pakistan at a time when Pakistan was facing financial difficulities. Critics cliam that he presents distorted facts from Islamic History and use to mix cheap idealism to attract semi-litrate crowd, espacially females. Some even claim that he is ‘forwarding’ the ‘mission‘ of his ‘prophet’ in wake of recruting youth and a Jihadi group to become a ‘Khalifah’.

    Some people accuse him as a CIA agent who is trying to radiclise and divide the educated youth which played a decisive role in struggle against American backed dirtator Pervez Musharraf and for restoration of Judiciary. Others claim that he is wroking on American agenda to bring down Pakistan’s economy and develop a distrust of investors on Banking System and push in an economic squeez. His sponsors and clients are mostly American Corportes and Oil Companies according his website these corporates mostly sponsor overseas assets of CIA, although aparently he speaks agsinst CIA and USA but still gets finaces from same sources. Some even see him as developing a new ‘Jihadi Group’ of educated youth from middle class families.

    According to his own website he claims to be;

    1. Participated in CIA backed Afghan war against Soviet Union for six years on frontline;

    2. To be a close associate of top Talban leadership and Osama Bin Ladens metor,

    3. To be a ’security expert for several ‘Multinational Companies’

    4. A support fo former Dictator and a critic of democracy and advocating for ‘Khilafat’;

    The ‘Hate speech’ is the last thing our society needs at this point of time when we are facing worst kind of religious extremism and sucide attacks. But if a person spreading such hatred is also associated with a false prophet and his nominee, then he needs to be questioned.
    I think this tape would be helpful for both sides to decide, as Zaid Hamid himself has chosen to keep silent on issue rather he is breeding further controversies with his speeches. If, it was a matter of an ‘individual’ and his personal beliefs, it would not have been of any importance for others.

    However, as Mr. Zaid Hamid has chosen to be a public figure, it is right of every one to have knowledge of his past, his future plans and ideology behind his sermons.
    As Mr. Zaid Hamid is not willing to clarify his position on these isuues, readers can make their minds based of discussion in these topics and after listening the speech in this audio recording, which is said to be part of court record.

    Here is the Audio
    You can also follow this link:

    http://www.esnips.com/doc/9ea006f1-fa0e-41d5-a6ea-185ec9e68bf0/yousuf-kazzab

  7. Pingback: Who is Zaid Hamid? « Long Live Pakistan

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s